بروز جمعہ والدین کی قبروں کی زیارت کا ثواب

یہ روایت بیان کرکے حافظ ابن عدی رحمہ اللہ نے فرمایا: “اور یہ حدیث اس سند کے ساتھ باطل ہے اس کی کوئی اصل نہیں، اور اس کے علاوہ عمروبن زیاد کی بیان کردہ اور روایتیں بھی ہیں

جو اس نے ثقہ راویوں سے چرائی ہیں اور ان میں موضوع روایات بھی ہیں جن کے گھڑنے میں یہی متہم ہے۔افظ ابن عدی نے فرمایا: “منکر الحدیث، یسرق الحدیث و یحدث بالبواطیل” منکر روایتیں بیان کرتا تھا، حدیثیں چوری کرتا تھا اور باطل روایات بیان کرتا تھا۔ (الکامل لابن عدی: ۱۸۰۰/۶، ۲۵۹/۶)امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ نے صفوان رحمہ اللہ سے بيان كيا ہے وہ كہتے ہيں مجھے مشائخ نے بيان كيا
كہ وہ غضيف بن الحارث الثمالىجو كہ صحابى ہيںكى موت كے وقت ان كے پاس حاضر ہوئے تو وہ كہنے لگے: كيا تم ميں سے كوئى يٰس كى تلاوت كرتا ہے ؟

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.