یہ ایک دانہ کھانے سے کیا ہوگا

اکثر ہی ایسا ہوتا ہے کہ ہم کسی بیماری کی دوائی لیتے ہیں اور ہم ٹھیک ہوجاتے ہیں لیکن کچھ وقت گزرنے کے

بعد وہ بیماری بڑی بن کر ہمارے سامنے آتی ہے جیسا کہ شوگر آپ پچھلے دس سال سے شوگر کی دوائی لے رہے ہوں گے ایک وقت ایسا آئے گا جب آپ کا لیور اور کڈنی فیل ہوجائیں گے اور ڈاکٹر آپ کو کہے گا کہ یہ شوگر کی وجہ سےہی ہیں تو یہ شوگر کی وجہ سے نہیں آپ کے ان دوائیوں کے لینے کی وجہ سے ہے جو دوائی آپ لیتے ہیں اس سے آپ کی شوگر کنٹرول ہو نہ ہو لیکن آپ کی کڈنی اور لیور ڈیمیج ہوسکتے ہیں اگر بات کریں ہائی بلڈ پریشر کی تو آپ ہائی بی پی کی دوائی لیتے رہیں گے اور آگے چل کر آپ کو برین اسٹروک آجائے گا پیرالائسز ہوجائے گا ہارٹ اٹیک ہوجائے گا تو ڈاکٹر آپ سے کہے گا کہ اپنے دل میں اسٹنٹ ڈلوا لو مسئلہ تو بلڈ پریشر کاتھا۔اب یہ ہارٹ اٹیک کا مسئلہ کہان بن گیا مسئلہ سردرد کا ہوتا ہے دوائیاں لیتے رہتے ہیں اور یہ سردرد مائیگرین بن جاتا ہے وجہ ہے کہ ہم بیماری کا علاج کرتے ہیں

بیماری ہونے کی وجہ کا نہیں بیماری کو سپریس کرنے کی کوشش کی جاتی ہے بیماری کو جڑ سے ختم نہیں کیاجاتا جس وجہ سے بیماری کی جڑ وہیں کی وہیں رہ جاتی ہے اور وہ بیماری بڑی بن کر ہمارے سامنے آتی ہے بیماری کوئی بھی ہو اس کو روٹ سے سمجھنا بہت ہی ضروری ہے اور جو بیماریوں کا روٹ کاز ہے وہ ہے ہمارے پیٹ کی خرابی یعنی کہ قبض کا مسئلہ آج کل پوری دنیا میں سبھی لوگوں کو قبض ہے اور یہ قبض ہی ایک ایسی بیماری ہے جس سے ساری بیماریاں ہوتی ہیں اور ہم لوگ اسے سمجھ ہی نہیں پاتے قبض ہونے پر آپ کو سو سے زیادہ بیماریاں ہوتی ہیں اور ہم ہمیشہ ان سو بیماریوں میں ہی الجھے رہتے ہیں۔بیماریوں کی جڑ جو قبض ہے اس کی طرف تو دھیان ہی نہیں دیتے کیا ہوا آج کھایا اور چار دن بعد نکالا ہماری پوٹی تک یہ بتادیتی ہے کہ انسان کتنا صحت مند ہے اور کتنا نہیں آپ ایک سال کے چھوٹے بچے کی پوٹی دیکھئے ایک کیلے کے برابر ہوتی ہے

اور اپنی پوٹی کا سائز دیکھئے ایک انگلی کے برابر ہوگی اس چیز کو تھوڑا سمجھنے کی کوشش کیجئے ہماری بڑی آنت سکڑ چکی ہے ہماری بڑی آنت کمزور ہو چکی ہے اس وجہ سے آپ کی پوٹی کا سائز بہت پتلا ہوچکا ہے بڑی آنت سکڑنے کی وجہ سے آپ جو بھی کھارہے ہیں اس کا فائدہ آپ کی باڈی کو مل ہی نہیں رہا جو بھی آپ کھاتے ہیں وہ آپ کے پیٹ میں سڑنے لگتا ہے ایبزارب نہیں ہوتا ایسے کیسے ہوا ہمارے غلط کھانے پینے کی چیزوں سے ہر وقت میدے سے بنی چیزیں کھانا فرائیڈ فوڈ کھانا ٹھنڈا پانی پینا کولڈ ڈرنکس پینا یہ چیزیں ہماری آنتوں کو کمزور کرتی ہیں اسی وجہ سے ہماری بڑی آنت کمزور ہوجاتی ہے جب ایک بچہ پیدا ہوتا ہے تو اس کے اسٹول کا یعنی پوٹی کا سائز وہ ایک کیلے کے برابر موٹائی ہوتی ہے۔لیکن جیسے جیسے بڑے ہوتے جاتے ہیں یہ سائز بڑا ہونا چاہئے تھا لیکن یہ سائز آہستہ آہستہ ہماری انگلی کے سائز جتنا ہوجاتا ہے اس چیز کو سمپل نہ سمجھئے اس چیز کو سمجھنے کی کوشش کریں ہمیں کچھ ایساکھانا ہے

جس سے ہماری آنتیں مضبوط ہوں کیونکہ ہماری آنتوں کا کام ہے ہمارے کھانے میں سے وٹامنزمنرلز کو لے کر ہمارے خون تک پہنچانا اگر ہماری آنتیں ہی کمزور ہوں گی تو کھانے میں جتنے مرضی وٹامنز منرلز ہوں وہ آپ کی باڈی میں ایبزارب ہوں گے ہی نہیں پھر چاہے جتنی مرضی سپلی منٹس لے لیں آپ کو کوئی فائدہ نہیں ہونے والا۔الائچی ہر گھر میں ہے لیکن الائچی کا استعمال کیسے کرتے ہیں چائے میں ڈال کر ایک تو چائے صحت کے لئے بری ہے اور اوپر سے اسے ذائقے دار بنا کر زیادہ سے زیادہ چائے پیتے رہتے ہیں غلطیاں ہماری ہیں اور ہم غلط ٹھہراتے ہیں دوسرے کو الائچی کا استعمال صحیح طریقے سے کریں کیونکہ یہ ایک جڑی بوٹی ہے یہ کو ئی ٹیسٹ بڑھانے کے لئے کوئی مصالحہ نہیں ہے رات کو سونے سے پہلے ایک الائچی کا استعمال کیجئے اس طرح سے اگر آپ روزانہ رات کو سوتے وقت ایک الائچی کھاتے ہیں تویہ آپ کی باڈی سے بہت سی بیماریوں کو جڑ سے ختم کر دیتی ہے۔اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *