آ گ سے جلنے اور تیزاب سے جھلسنے والے داغ

چائے کا داغ : آج کل گھروں میں قالین بچھے ہوتے ہیں۔ چائے دانی الٹ جائے تو مشکل ہوتی ہے۔

چائے پرفوراً پسا ہوا نمک لا کر چھڑ ک دیں۔ خشک ہونے پر برش سے صاف کریں۔ چائے کا دھبہ غائب ہوجائےگا۔ اسی طرح بستر پر ریشمی چادر پر چائے گرجائے تو نمک چھڑک دیں۔ دودھ والی چائے ہوتو تب بھی پہلے نمک ڈال دیں۔ پھر تیز گر م پانی میں سرف ڈال کر کپڑے دھو لیں۔ اسپرٹ سے بھی دھبے صاف ہوجاتے ہیں۔ پانی میں سہاگہ ملا کر بھی دھو سکتی ہیں۔ کافی کے داغ گہرے ہوتو پٹرول سے صا ف کرلیں۔ ہائیڈروجن پرآکسائیڈ سے بھی چائے اور کافی کےدھبے مٹ جاتے ہیں۔ مگر کپڑے کارنگ مدھم پڑجاتا ہے۔ چمڑے کی چیزوں کے دھبے دور کرنا: چمڑے کی چیزوں پر داغ پڑجائیں ۔ تو ہلکا ساتیل کپڑے پر لگا کر صاف کریں۔

پھر اچھی قسم کی موم لے کر چمڑے پر رگڑیں ۔ سارے داغ دور ہوں گے۔ آگ سے جلنے اور تیزاب سے جھلسنے والے داغ: آگ سے جلنے کے بعد داغ پڑجاتا ہے۔ اس کےلیے ایک دیسی نسخہ ہے ۔ ایک پاؤ سرسوں کا تیل لیں۔ اور آدھ پاؤ گڑ لے

کر ذرا کوٹ لیں۔ تیل میں گڑ ملا کر ہلکی آنچ پر پکائیں۔ گڑ جل کر سیاہ کوئلہ بن جائےتو اتار لیں۔ گڑ نکال کر پھینک دیں۔ تیل کسی بوتل میں محفوظ کرلیں۔ رات کو سوتے وقت تیل داغ پر لگائیں۔ صبح دھو لیں۔ ایک ماہ کے استعمال کےبعد داغ کم ہوں گے۔ پھول کتھا پنسار یوں کے ہاں مل جاتا ہے۔ اس سے داغ مٹ جاتے ہیں۔ خصوصاً بچوں کےلیے یہ نسخہ بہت اچھا اورآزمودہ ہے۔ پیالیوں کے داغ دور کرنے کے لیے : نمک اور سوڈا ملا کر کپڑے سے پیالوں پر لگا دیں۔ ذرا سا پانی ملائیں۔ تاکہ پیالوں پر اچھی طرح لگ سکے۔

نائلون کے برش پر وم لگا کر خوب رگڑیں۔ داغ دھبے دور ہوجائیں گے۔ چکنائی کے داغ دور کرنا: گرم کپڑوں پر اکثر چکنائی کے داغ لگ جاتے ہیں۔ چکنائی کے داغ پر تھوڑا دہی لگا دیں۔ اور پھر صاف کرلیں۔ دھبے صاف ہوجائیں گے۔ مخمل کے داغ: پوٹین کپڑے پر لگ جائے تو آپ کلوروفارم سے صاف کریں۔ تھوڑی دیر خوب رگڑیں۔ تارپین کے تیل سے پوٹین کے داغ دور ہوتے ہیں۔ تاپین کا تیل کپڑے سے داغ پر لگائیں اوررگڑیں۔ پھرصابن سے دھو لیں۔ مٹی کا تیل رنگ روغن پوٹین کے داغ دور کردیتا ہے۔ ہاتھ پر رنگ لگ جائے تومٹی کے تیل سے صاف کریں۔ صابن سے دھو کر سرسوں کا تیل لگا لیں۔ پھپھوندی کےداغ: ٹماٹر کے رس میں نمک ملا کر داغ پر لیپ کردیں۔ دھو پ میں دو گھنٹہ رہنے دیں۔ پھر سرف اور پانی سے خوب دھو لیں۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *