معدے اور جگر کی گرمی ختم انشاء اللہ

پیروں کی تلیاں کیوں جلتی ہیں اس کی سب سے بڑی وجہ اس کو سادہ سمجھو

انسان بنا ہے مٹی سے اور شیطان کس سے بنا ہے ۔ جہاں جلن آئے گی وہاں پر کون آئے گا شیطان ۔ ہم سمجھتے ہیں کہ مولوی بکواس کر رہا ہے اس کے ہر کام میں شیطان ہی پھر رہا ہو تا ہے کبھی تو شیطان یا فرشتوں سے ہٹ کر بات کر لیا کر ے نہیں۔ ایسا نہیں ہے۔ میں آپ کو حقیقت بتانے کی کوشش کر تا ہوں

کہ ہر معاملے کے پیچھے روحانیت کا بہت بڑا عمل دخل ہو تا ہے ہر معاملہ بھی بیماری کا نہیں ہوتا کچھ روحانی پیچیدگیوں کا بھی ہوتا ہے کیو نکہ ہم جسمانی صحت کا خیال تو رکھتے ہی ہیں۔مگر روحانیت کا بالکل بھی خیال نہیں رکھتے جیسا کہ میں اکثر ہی کہتا رہتا ہوں کہ انسان کے جسم کے اندر جو نوے فیصد بیماریاں ہوتی ہیں وہ انسان کے جسم کے اندر پلنے والی بیماریاں ہیں تو سہی ہی لیکن وہ بیماریاں جناتی اثرات کی وجہ سے پیدا ہوئی ہوئی ہیں اگر ہم ان جناتی اثرات کے بارے میں مشاہدہ کر یں گے توآپ کو بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا اور آپ جان پائیں گے کہ جناتی اثرات ہوتے کیا ہیں۔ اب مثال دیتا ہوں آپ کو کہ ہم رات میں اگر برتن اندھیرے میں رکھ دیتے ہیں ۔ اور اس کو ڈھانپتے

ہی نہیں ہیں کسی برتن کے ساتھ یا کسی کپڑے کے ساتھ تو بدلے میں کیا ہوگا ؟ کیا آپ لوگ جانتے ہیں؟ بدلے میں یہ ہوگا کہ جناتی چیزیں آئیں گی اور اس چیز کو چھک کر چلی جائیں گی اور جب ہم صبح اٹھ کر اس چیز کو چھکیں گے تو ہم کیا ہوں گے۔او ہم بیمار ہی ہوں گے ۔ صحت مند تھوڑ ے ہی نہ ہوں گے۔ کیو نکہ ان کی جناتی اثرات کی چیزیں ہم تک پہنچ چکی ہیں ہمارے جسم کے اندر جا چکی ہیں۔ اسی طرح جب ہم پانی کا گلاس پینے کے لیے لاتے ہیں تو تھوڑا سا پانی پی کر گلاس میں پانی بچا کر رکھ دیتے ہیں تو بدلے میں کیا ہو تا ہے یہ جناتی اثرات والی چیزیں آتی ہیں اور اس پانی کو پی کر چلی جاتی ہیں بدلے میں اگر ہم یہ پانی پیتے ہیں تو ہمیں بیماریاں ہی لگیں گی کیو نکہ پلیتیت ہمارے جسم میں جا چکی ہو گی تو ہمیں چاہیے کہ ہم ان باتوں کا خیال رکھیں اور بہت اچھے سے خیال رکھیں۔ کہیں پر جلن ہے۔ معدے میں جلن ہے ۔پیروں میں جلن ہے سینے پر ہے گردوں پر ہے چاہے آنتوں میں ہے چاہے پیشاب کرنے سے پہلے ہے یا بعد میں ہے چاہے پخانہ کرنے سے پہلے ہے یا بعد میں ہے چاہے ہاتھوں میں چاہے جسم میں۔ جہاں جلن آئے وہاں پر ٹھنڈک بناؤ اور آپ کو پتہ ہے ٹھنڈک کیا ہے؟ دھنیاں اور پو دینہ۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *